ا

khwab main insani aankh ki aabro dekhna

khwab main insani aankh ki aabro dekhna

khwab main insani aankh ki aabro dekhna

khwab main insani aankh ki aabro dekhna

1khawab me isani aankh o  abro ko khubsurat dekhna deeni o dunyavi wajahat or husn o khubsurti ki daleel he

2agar aankh o aabroen ko achhi halat me dekhe to to uski halat bhi achhi hogi

3agar aankh or aabruen ko buri halat me dekhe to uski halat bhi buri hogi

4agar kisi ne api aabru ko gunjaan baal or black  dekha to uski achhai or neek ammal ki taraf ishara he kyun k aorten hasul e zeenat k liye apni abron ko black karti hen

5abruen waldain do beton do sharekon miyan bivi do naib ya do dabano par bhi dalallat karta he

6agar dekhe k abruen apas me mili hui hen  in me ulfat o muhabbat par daal he

  7agar abruen juda juda hen to in me adawat or dushmani ki daleel he

8agar khwab me dekhe k kisi ki abruen kali  aur gunjan bal hen k dekhne se buri maloom nahe hotin to ye us ki achi halat ki daleel he

9agar abruen sufaid kam balon wali aankhon par giri hui hon to is ka matlab ye he k us k bete shareek bivi nayeb ya malik ka rawaiya tabdeel hoga

10agar khud kois halat me dekhe to ye darazi e umar ki daleel he abruen deeni martaba ki akkas hoti hen

11agar unhen achi halat me dekhe to deeni martaba qayem rahega agar na zawal pazeer ho ga kabhi abroo se hifazat karne wale afrad ki taraf ishara hota he jese darban waali wasee aur khawand waghaira

1khawab me isani aankh o  abro ko khubsurat dekhna deeni o dunyavi wajahat or husn o khubsurti ki daleel he

اچھا خواب نعمتِ خدا وندی

حضورﷺ نے ارشاد فرمایا ” بشارتوں کے سوا کوئی چیز باقی نہیں رہی ۔ صحابہ نے عرض کیا ےیا رسولاللہ بشارتوں سے کیا مراد ہے آپ نے فرمایا سچا خواب ۔(صحیح بخاری عن ابی ھریرہ) بخاری ومسلم کی متفق علیہ حدیث ہے آنحضرت ﷺ نے ارشاد فرمایا کہ سچا خواب نبوت کا چھیاسواں حصہ ہے ۔

اس حدیث شریف معلوم ہوا کہ سچا خواب رویائے صالحہ علوم نبوت کا ایک جزو ہے اور علم نبوت باقی ہے گو انبیاءکرام کی آمد کا سلسلہ موقوف ہوچکا دوسرے لفظوں میں سچا خواب علوم نبوی کا عکس ہے۔

خواب کی اقسام

امام محمد بن سیرین ارشاد فرماتے ہیں کہ خواب تین قسم کے ہوتے ہیں ۔

1- مبشرات خداوندی –

2- تخویفِ شیطان) شیطان کے زیرِ اثر ) –

3- حدیثِ نفس یعنی ذہنی اور دماغی خیلات کا عکس –

اس تقسیم سے ظاہر ہوتا ہے کہ خواب کے تمام اقسام صحیح قابلِ تعبیر اوردر خوراعتناء نہیں ہوتے تعبیر اور اعتبار کے لائق وہی خواب ہوتے ہیں جو حق تعالیٰ کی طرف سے بشارت اور اعلام پر مبنی ہوں۔

علم تعبیر کے چھ مشہور امام
-علم تعبیر میں درج ذیل چھ آئمہ کرام کے اقوال کے بطور سند پیش کیا جاتا ہے
حضرت دانیال علیہ اسلام
حضرت امام جعفر صادق رضی اللہ تعالیٰ علیہ
حضرت امام محمد بن سرین رحمتہ اللہ علیہ
حضرت امام جابر مغربی رضی اللہ تعالیٰ علیہ
حضرت امام ابراہیم کرمانی علیہ رحمتہ اللہ علیہ
حضرت امام اسمعیل بن شوکت رحمتہ اللہ علیہ
تعبیر بیان کرنے کیلئے ضروری علوم
۔علم تفسیرعلم ضرب الامثالعلم حدیثاشعار عربعلم اشتقاق (صرف)نوادرعلم الغاتعلم الفاظ متد اَولہچنانچہ ایسے علماء ہے تعبیر بیان کرنے کے اہل ہیں جو ان علوم کے ماہر اور متقی پرہیزگار ہوں ۔
الوسوم

اترك تعليقاً

لن يتم نشر عنوان بريدك الإلكتروني. الحقول الإلزامية مشار إليها بـ *

زر الذهاب إلى الأعلى
إغلاق